30 May 2012

Wo jo naksh thay teri yad k mujhay khuwab kasay dikha gaey…..

Wo jo naksh thay teri yad k mujhay khuwab kasay dikha gaey…..

kabhi waqt rah main ruk gia kabhi phool lot k aa gaey……

wo jo geet tum nay suna nhn meri umer bhar ka riaz tha….

meray dard ki thi wo dastan jisay tum hansi main urra gaey….

ye jo silsala sa hai piyar ka main nay dakha is main ye mojza….

wo jo lafz meray gumaan main thay wo teri zuban pay aa gaey….

meri umer say na simat sakay meray dil main itnay swal thay…:(

teray pas jitnay jawab thay meri ek nigaah main aa gaey……

Muhabbat is tarah jaise gulabi titliyon k pr

Muhabbat is tarah jaise gulabi titliyon k pr,
Mohabat zindgani ki jabeen-e-naz ka jhoomr,
Muhabbat arzoo ki seep ka anmol sa gohar,
Mohabat aas ki dhoop me umeed ki chaadar,
Mohabat hi tery gesu,
teri palken,
teri ankhen,
Mohabat he teri baaten,
Mohabat he tmhary hijar ki or wisl ki raaten,
Mohabat he teri dharkan,
Mohabat he teri saansen,
Mohabat tmhari baat jesi he,
Mohabat ko agar samjho, to tmhari zaat jesi he…!

When U feel U R alone in the Crowd

When U feel U R alone in the Crowd,
When U Think No 1 can Understand U,
When UR love is rejected by others,
& when U hate UR Life,
Just Close UR eyes,
& see,
Her face who Loves U
more than any 1 else,
Who Care 4 U in loneliness,
& dies when U cry.
She is no 1, But UR Sweet Loving Mother.
Love UR Mom First.

29 May 2012

Go Chal Parra hun Dil say, magar Chahta hun ye

Go Chal Parra hun Dil say, magar Chahta hun ye
Uthh k Mujhay wo Rok le, aur Raasta Na Day!

27 May 2012

bara munfarid khail hai MOHABAT saray khailon meon

bara munfarid khail hai MOHABAT saray khailon meon
.
 jo hara phr na khela wo.......jo jeeta usne toba ki.....

24 May 2012

Chalte hain wo bhi hamse tever badal-bdal ke

Chalte hain wo bhi hamse tever badal-bdal ke,

Jinko sikhaya hamne chalna samhal-samhal ke

19 May 2012

Ye dil ka rogh ye chahat khuda kisi ko na dy

Ye dil ka rogh ye chahat khuda kisi ko na dy,

Buri bala hay muhabbat khuda kisi ko na dy

16 May 2012

Laholuhan ta main aur adal ki maizan

Laholuhan ta main aur adal ki maizan,

juki thi janib e qatel ke raj uska ta,

Tujay ghela hay ke duniya nai pair le ankhain,

Faraz ye to sada se riwaj uska ta

13 May 2012

jo dil ka dard ta kaghaz pe sub bakair diya

jo dil ka dard ta kaghaz pe sub bakair diya

per apne aap tabiyat mari sambalny lagi

Ye kamyabian ye izzat ye naam tum se hain

Ye kamyabian ye izzat ye naam tum se hain
Khuda ne jo bi diya hain maqam tum se hain
Tumhare dam se hain mere laho main kilthe ghulab
Mere wajood ka sara nizam tum se hain
Kahan bisat jahan aur main kamsin wa nadan
ye mere jeet ka sab aihtemam tum se hain
jahan jahan hain meri dushmani sabab main hoon
jahan jahan hain mera aihteram tum se hain

kisi ko ghar mila hissay main ,ya koi dukan ayi

kisi ko ghar mila hissay main ,ya koi dukan ayi
main ghar main sub se chota ta mere hissy main maa ayi

Us tarha ki fehmaish

To my dear mother

To my dear mother
To one who bears 
The sweetest name,
and adds lustre
to the same,
long life to her,
for there's no other
who makes the place
of my dear mother

Jannat e nazeer hai mari maa

Es zulam ki duniya main faqat pyar mai Maa

Es zulam ki duniya main faqat pyar mai Maa

Hai mere liye saya e dewaar mari Maa

Nafrat ki jazeron se muhabbat ki hadon tak

bus pyar hay bus pyar hai bus pyar mar Maa

Dastan Mere Lad Pyar Ki Bas

Dastan Mere Lad Pyar Ki Bas

Aik Hasti K Gird Ghoomti Hai

Pyaar Jannat Se Is liye Hai Mujhe

Ye Meri 'Maa' K Qadam Choomti Hai

12 May 2012

khwaab poch ankhon main

خواب پوش آنکھوں میں
آنسوؤں کا بھر جانا
حسرتوں*کے ساحل پر
تِتلیوں* کا مر جانا
حبس کی ہواؤں* میں
خوشبوؤں* کا ڈر جانا
دل کے گرم صحرا میں
حشر ہی بپا ہونا
درد لا دوا ہونا
کیا بہت ضروری ھے؟
اب تیرا جدا ہونا

Suno tum maan jao na

SunO TuM MAAN JaO NA

Tum MAAN Jao NAA,
HUMEIN Ab Yun SATAOO NA,

TUMHAARE Bin HUMEIN
JEENA,
GAWAARA Ab NAHI Hota,

Tumein KAISE Kahoon
TUM BIN,
GUZAARA Ab Nahi HOTA,

Humein APNA Bana LO
TUM,
Tumhaara Ban Ke REHNA Hai,

MUJHE Dukh HIJAR Ka
JANAM,
Nahi Ab Aur SEHNA Hai,

Kaai SAPNE Sajaain
HAIN,
In Mein RANG Bhar Doo NA,

TUMEIN Meri QASAM
JAANA,
Mere SANG Chal Doo NA,

MUJHE Ab AUR Rulao NA
SUNO,
TuM MAAN JaO NA..!!!

MujhKo Yaqeen Hai Such Kehti Thien Jo Bhi Ami Kehtien Thien

MujhKo Yaqeen Hai Such Kehti Thien Jo Bhi Ami Kehtien Thien
Jab Mere bachpan ke din thay chand Main parian rehtien thien.

Aik yeah din jab apnoon ne bhi hum se nata torde liya
Aik wo din jab pair ki shakhien bhoj humara sehtien thien.

MujhKo Yaqeen Hai Such Kehti Thien Jo Bhi Ami Kehtien thien….

Aik yeah din jab sari sardkien rothi rothi lagtien hain
Aik wo din jab Aao khielien sari ghalian kehti thien.

MujhKo Yaqeen Hai Such Kehti Thien Jo Bhi Ami Kehtien Thien…

Aik yeah din jab jagi ratien deewaroon ko takti hain
Aik wo din jab Shamoon ki bhi palkien bhojal rehtien thien.

MujhKo Yaqeen Hai Such Kehti Thien Jo Bhi Ami Kehtien Thien…

Aik yeah din jab Lakhoon ghum aur kaal para hai aansoo ka
Aik wo din jab aik zara See baat pe nadiean behtien thien.

MujhKo Yaqeen Hai Such Kehti Thien Jo Bhi Ami Kehtien Thien


Jab Mere bachpan ke din thay chand Main parian rehtien thien….
Share




 

Ek moamma hai samajhne ka, na samjhaane kaa

Ek moamma hai samajhne ka, na samjhaane kaa
zindagii kaahe ko hai, Khwaab hai diivaane kaa

khalq kahtii hai jise dil tere diivaane kaa
ek gosha hai yeh duniyaa isii viiraane kaa

dil se poNhchii to hai aaNkhoN meN lahuu kii buundeN
silsila shiishe se miltaa to hai paimaane kaa

hamne chhaanii hai bohat dair-o-haram kii galiyaaN
kahiiN paaya na Thikaana tere diivaane ka

har nafs umr-e-guzishtaa ki hai mayyat Faani
zindagi naam hai mar mar ke jiye jaane kaa

Abhee Kuch Aur Karishmay Ghazal Kay Dekhtay Hain

Abhee Kuch Aur Karishmay Ghazal Kay Dekhtay Hain
Faraz Ab Zara Lehja Badal Kay Dekhtayhain

Judaaiyan To Muqaddar Hain Phir Bhee Jan-E-Safar
Kuch Aur Door Zara Sath Chal Kay Dekhtay Hain

Rahe-E-Wafa Main Hareef-E-Kharam Koi To Ho
So Apnay Aap Say Agay Nikal Kay Dekhtay Hain

Tu Saamnay Hay To Phir Kyun Nazar Nahin Aata
Yeah Baar Baar Joankhon Ko Mal Kay Dekhtay Hain

Yeh Kon Log Hain Mojood Teri Mehfil Main
Jo Lalachon Say Tujhay , Mujh Ko Jal Kay Dekhtay Hain

Yeh Qurb Kya Hai Kay Yakjaan Huay Na Door Rahay
Hazar Aik Hee Qalib Main Dhal Kay Dekhtay Hain

Na Tujh Ko Maat Huee Hai Na Mujh Ko Mat Huee
So Ab Kay Donon Hee Chalen Badal Kay Dekhtay Hain

Yeh Kon Hay Sar-E-Sahil Kay Doobnay Walay
Samandaron Ki Tahon Say Uchal Kay Dekhtay Hain

Abhee Talak To Na Kundan Huay Na Raakh Huay
Ham Apni Aag Main Har Roz Kay Jalkay Dekhtay Hain

Bahut Dinon Say Nahin Hay Kuch Us Ki Khabar
Chalo Faraz Ko, Ai Yaar Chal Kay Dekhtay Hain

Zaroor koi kami meri apni zaat mein hai

Zaroor koi kami meri apni zaat mein hai
Jo aik karb musalsal meri hayaat mein hai

Kisay sunaaoon yahaan kon kis ki sunta hai
Her aik shakhs muqaiyad khud apni zaat mein hai

Na-jaanay sheher mein kab kon qatal ho jaaye
Jisay bhi dekhiye ik doosray ki ghaat mein hai

Kisi sifat mein bhi apni nazer nahi aata
Ye aik sifat bhi shaamil to teri zaat mein hai

Main apni zaat mein maana k naa-mukammal hoon
Wo kon hai jo mukammal khud apni zaat mein hai

Ye sochta hoon ShihaaB jaaoon to kahaan jaaoon
Sukoon din mein mayassar hai or na raat mein hai !

Ay dil walo ghar se neklo,daita dawat e aam hy chand

اے دل والو گھر سے نکلو، دیتا دعوتِ عام ہے چاند
شہروں شہروں، قریوں قریوں وحشت کا پیغام ہے چاند

تو بھی ہرے دریچے والی، آ جا بر سر ِبام ہے چاند
ہر کوئی جگ میں خود سا ڈھونڈے، تجھ بن بسے آرام ہے چاند

سکھیوں سے کب سکھیاں اپنے جی کے بھید چھپاتی ہیں
ہم سے نہیں تو اس سے کہہ دے، کرتا کہاں کلام ہے چاند

جس جس سے اسے ربط رہا ہے اور بھی لوگ ہزاروں ہیں
ایک تجھ ہی کو بے مہری کا دیتا کیوں الزام ہے چاند

وہ جو تیرا داغ ِغلامی ماتھے پر لئے پھرتا ہے
اس کا نام تو انشا ٹھہرا، ناحق کو بدنام ہے چاند

ہم سے بھی دو باتیں کر لے کیسی بھیگی شام ہے چاند
سب کچھ سن لے آپ نہ بولے، تیرا خوب نظام ہے چاند

ہم اس لمبے چوڑے گھر میں شب کو تنہا ہوتے ہیں
دیکھ کسی دن آ مل ہم سے، ہم کو تجھ سے کام ہے چاند

اپنے تو دل کے مشرق و مغرب اس کے رخ سے منوّر ہیں
بے شک تیرا روپ بھی کامل، بے شک تو بھی تمام ہے چاند

تجھ کو تو ہر شام فلک پر گھٹتا بھڑتا دیکھتے ہیں
اس کو دیکھ کے عید کریں گے، اپنا اور اسلام ہے چاند

ابن ِانشا

03 May 2012

Ye payam de gai hay mujay bad e subha gahi

يہ پيام دے گئی ہے مجھے باد صبح گاہی
کہ خودی کے عارفوں کا ہے مقام پادشاہی
تری زندگی اسی سے ، تری آبرو اسی سے
جو رہی خودی تو شاہی ، نہ رہی تو روسياہی

Manzilain bhi ye shakista bal o par bhi dekna

منزلیں بھی، یہ شکستہ بال و پر بھی دیکھنا
تم، سفر بھی دیکھنا، رختِ سفر بھی دیکھنا

حال ِدل تو کُھل چکا اس شہر میں ہر شخص پر
ہاں مگر اس شہر میں اک بے خبر بھی دیکھنا

راستہ دیں یہ سُلگتی بستیاں تو ایک دیں
قریۂِ جاں میں اترنا، یہ نگر بھی دیکھنا

چند لمحوں کی شناسائی مگر اب عمر بھر
تم شرر بھی دیکھنا، رقص ِشرر بھی دیکھنا

جس کی خاطر میں بُھلا بیٹھا تھا اپنے آپ کو
اب اسی کے بھول جانے کا ہُنر بھی دیکھنا

یہ تو آدابِ محبّت کے منافی ہے عطا
روزن ِدیوار سے بیرون ِدر بھی دیکھنا

عطا الحق قاسمی

01 May 2012

Agar khabi jo haseen yadain,

Agar khabi jo haseen yadain,
tumhary dil ke es ainay main,
gulab ban kar mehek utay to,
unhay mari jan sambaly rakna,
neshaniyan ab yahi rahangi,
tumhari mari wo chahaton ki

Mirza ali qasim

tere firaaq ke lamhe shumar karte huwe

tere firaaq ke lamhe shumar karte huwe
bikhar chale hain tera intezaar karte huwe

tu mein bhi khush hoon koi us se ja keh dena
agar woh khush hai mujhe beqarar karte huwe

tumhe khabar hi nahi ke koi toot gaya
mohabatoon ko payedaar karte huwe

Mein muskurata huwa aaine mein obroo ga
woh ro parey gi achanak singhaar karte huwe

Mujhe khabar thi ke aab laut kar na aaye ga woh
so tujh ko yaad kiya dil pe waar karte huwe

woh keh rahi thi samandar nahi aankhien hain
mein un mein doob gaya aitebaar kartey huwe

banhwar jo mujh mein parey hain woh mein hi janta hoon
tumhare hijar ke darya ko paar kartey huwe

Kisi khamosh lamhe mein

Kisi khamosh lamhe mein
Agar mein tum se yeh keh doon
"Mujhe tum se mohabbat hai"
To tum yeh mat samajh lena
key meine sach kaha ho ga
Kay aisi dil nasheen batoon ko
aise dil ruba paraee mein kehna
mujhe bachpan se ata hai
Meri aankhein
mera chehra
mera bay-sakhta lehja
sub kuch jhoot kehta hai
Magar iss jhoot mai bhi

ek sach hai
Aur woh yeh!
"Mujhe tum se mohabbat hai"

Ay dil e beqara chup hoja

اے دلِ بے قرار، چپ ہو جا
جا چکی ہے بہار چپ ہو جا
اب نہ آئیں گے روٹھنے والے
دیدہ اشکبار ! چپ ہو جا
جا چکا ہے کارواں لالہ و گل
اُڑ رہا ہے غبار چپ ہو جا
چھوٹ جاتی ہے پھول سے خوشبو
روٹھ جاتے ہیں یار چپ ہو جا
ہم فقیروں کا اس زمانے میں
کون ہے غمگسار چپ ہو جا
حادثوں کی نہ آنکھ لگ جائے
حسرتِ سوگوار !چپ ہو جا
گیت کی ضرب سے بھی اے ساغر
ٹوٹ جاتے ہیں تار چپ ہو جا

ساغر صدیقی

Mushkilon se usy sambala hay

مشکلوں سے اِسے سمبھالا ہے
اِک تیرا غم جو ہم نے پالا ہے

عہد و پیمان توڑ کر سارے
مُجھ کو اُلجھن میں تُو نے ڈالا ہے

مِل گئیں تلخیاں زمانے کی
فِکرِ دُنیا نے روند ڈالا ہے

زندگی کھو گئی اندھیروں میں
کوں جانے کہاں اُجالا ہے

سب سے ملتا ہے مُسکُرا کر تُو
تیرا انداز ہی نرالا ہے

ہونٹ میں نے تو سی لیے ناصر
راز اپنوں نے ہی اُچھالا ہے

Chalao mana ke hum to ajnabi han

چلو مانا کہ ہم تم اجنبی ہیں
مگر یہ بھی تو سوچو
اجنبی کو دوست ہونے میں بھلا کیا دیر لگتی ہے

چلو مانا کہ ہم تم اجنبی ہیں
مگر سوچو اگر ہم زندگی کے کھیل کے کردار ہیں دونوں
تو ہم کو سامنے آنے پہ آخر کچھ تو کہنا ہے
کوئی دو لفظ ، دو جملے
مگر تم نے تو آنکھیں بند کر لی ہیںلبوں کو سی لیا شاید

چلو مانا کہ ہم تم اجنبی ہیں
مگر جب شہر اپنی آخری حدیں مٹا ڈالے
تو انسانوں کا اک جنگل جنم لیتا ہے ایسے میں
اور اس جنگل کے آپس میں الجھتے راستوں پر
کئی انسان پھرتے ہیں
جو اتنی بھیڑ میں رہ کر بھی تنہاء ہیں
اور اُن کے پاس اتنا وقت بھی باقی نہیں بچتا
کہ اپنی روح کی سچی طلب پہچان لیں وہ لوگ

چلو مانو کہ تم بھی ایسے ہی جنگل کے باسی ہو
اور اپنی روح کی گہرائیوں میں جھانک کر دیکھو
جو اپنی روح کی سچی طلب پہچان جاؤ تو
مجھے پہچان جاؤ گے
یقیناً مان جاؤ گے
کہ آخر اجنبی کو دوست ہونے میں بھلا کیا دیر لگتی ہے

Gulabon se mehki larki hogaye hon

گلابوں سے مہکی لڑی ہو گئی ہوں
محبّت کی پہلی کڑی ہو گئی ہوں

مجھے تُو نے ایسی نگاہوں سے دیکھا
کہ میں ایک پل میں بڑی ہو گئی ہوں

سر ِشام آنے کا ہے اس کا وعدہ
میں صبح سے در پر کھڑی ہو گئی ہوں

نہ چُھڑوا سکو گے کبھی ہاتھ اپنا
محبّت بھری ہتھکڑی ہو گئی ہوں

بہت دور ہے مجھ سے خوشیوں کا موسم
مُسلسل غموں کی جھڑی ہو گئی ہوں

جُدا کر نہ پائے گا اب کوئی ماہ رُخ
وہ خوشبو ہے میں پنکھڑی ہو گئی ہوں

Rishton ke dhoop chaon se azad hogaye

رشتوں کی دھوپ چھاؤں سے آزاد ہو گئے
اب تو ہمیں بھی سارے سبق یاد ہو گئے

آبادیوں میں ہوتے ہیں برباد کتنے لوگ
ہم دیکھنے گئے تھے تو برباد ہو گئے

میں پربتوں سے لڑتا رہا اور چند لوگ
گیلی زمین کھود کر فرہاد ہو گئے

بیٹھے ہوئے ہیں قیمتی صوفوں پہ بھیڑیے
جنگل کے لوگ شہر میں آباد ہو گئے

لفظوں کے ہیر پھیر کا دھندھ بھی خوب ہے
جاہل ہمارے شہر میں استاد ہو گئے

راحت اندوری

Sar e rah un se hath jo milaya ta

سرراہ اُن سے ہاتھ جو ملایا تھا
وفا بھی شرط تھی یہ کہاں بتایا تھا

ہو کیسے علم اُسے لذت جنوں جس نے
ہنسی مذاق کیا دل نہیں لگایا تھا

جو چھوڑنا تھا تو آس کیوں جگائی تھی
میں سنگ میل تھا کیوں ہمسفر بنایا تھا

یہ کیا خبر تھی کہ ساحل پہ جان جائے گی
جسے مسافر بھنور سے بچا کے لایا تھا

تمہارے بعد میں جیسے کوئی تماشا تھا
کہ سارا شہر مجھے دیکھنے کو آیا تھا

وہ برہمن تھا مجھے بولا کٹا دو ہاتھ اپنے
یا یہ کہو کہ مجھے ہاتھ کیوں دکھایا تھا

میں دل کے زخم گنوں یا گنوں کرم تیرے
سفر تھا رات کا ساتھی نہ کوئی سایہ تھا

میں اُس سے گھر نہ لٹاتا تو اور کیا کرتا
غنیم اب کے مسیحا جو بن کے آیا تھا

Buht sajaye te ankhon main khwaab main ne bhi

بہت سجائے تھے آنکھوں میں خواب میں نے بھی
سہے ہیں اس کے لئے یہ عذاب میں نے بھی

جدائیوں کی خلش اس نے بھی نہ ظاہر کی
چھپائے اپنے غم و اضطراب میں نے بھی

دیئے بجھا کے سر ِشام سو گیا تھا وہ
بتائی سو کے شبِ ماہتاب میں نے بھی

یہی نہیں کہ مجھے اس نے دردِ ہجر دیا
جدائیوں کا دیا ہے جواب میں نے بھی

کسی نے خون تر چوڑیاں جو بھیجی ہیں
لکھی ہے خون ِجگر سے کتاب میں نے بھی

خزاں کا وار بہت کارگر تھا دل پہ مگر
بہت بچا کے رکھا، یہ گلاب میں نے بھی

اعتبار ساجد

Jub bhi kisi shajar se samar toot kr gera

جب بھی کسی شجر سے ثمر ٹوٹ کر گرا
لوگوں کا اک ہجوم اِدھر ٹوٹ کر گرا

ایسی شدید جنگ ہوئی اپنے آپ سے
قدموں پہ آ کے اپنا ہی سر ٹوٹ کر گرا

ہاتھوں کی لرزشوں سے مجھے اس طرح لگا
جیسے میری دعا سے اثر ٹوٹ کر گرا

اتنی داستان ہے میرے زوال کی
میں اڑ رہا تھا جس سے وہ پر ٹوٹ کر گرا

وہ چاند رات دور چمکتا رہا نوید
بانہوں میں آ کے وقتِ سحر ٹوٹ کر گرا

Hum ko sauda ta sir ke man main te

ہم کو سودا تھا سر کے مان میں تھے
پاؤں پھسلا تو آسمان میں تھے

ہے ندامت لہو نہ رویا دل
زخم دل کے کسی چٹان میں تھے

میرے کتنے ہی نام اور ہمنام
میرے اور میرے درمیان میں تھے

میرا خود پر سے اعتماد اٹھا
کتنے وعدے میری اٹھان میں تھے

تھے عجب دھیان کے در و دیوار
گرتے گرتے بھی اپنے دھیان میں تھے

واہ! ان بستیوں کے سنّاٹے
سب قصیدے ہماری شان میں تھے

آسمانوں میں گر پڑے یعنی
ہم زمین کی طرف اڑان میں تھے

جون ایلیا

Dil kisi yaar e bewafa ki tarha

دل کسی یارِ باوفا کی طرح
باخبر ہے بہت خدا کی طرح

زندگی بھر تمہارا نام مرے
دل سے نکلا کسی دعا کی طرح

میں نے ہر موڑ پر تجھے ڈھونڈا
ہجر کے شہر کی ہوا کی طرح

عمر بھر تیرا دکھ اُٹھایا ہے
وقت کی دی ہوئی سزا کی طرح

کچھ نہیں سوجھتا محبت میں
خوف اور غم کی انتہا کی طرح

فرحت عباس شاہ

Nahi hota nasab mohabbat main

نہیں ہوتا نسب محبت میں
کیا عجم ، کیا عرب محبت میں

ہم نے اک زندگی گزاری ہے
تم تو آئے ہو اب محبت میں

اور کیا کلفتیں اٹھاتے ہم
ہو گئے جاں بلب محبت میں

خامشی ہی زبان ہوتی ہے
بولتے کب ہیں لب محبت میں

آگہی کے جہان کھلتے ہیں
چوٹ لگتی ہے جب محبت میں

یہ ہے دشتِ جنوں، یہاں آصف
چاک داماں ہیں سب محبت میں

Bahaar Kya Ab KhizaaN Bhi mUjh kO Galey Lagaye tO Kuch Na Paye

Bahaar Kya Ab KhizaaN Bhi mUjh kO Galey Lagaye tO Kuch Na Paye
maiN Barg e Sehra hoN yoN Bhi mUjh kO Hawa Uraaye tO Kuch Na Paye

maiN PastiyoN mieN Bhi Khush baRa hoN zameeN Key Malboos mieN jaRa hoN
Misaal e Naqsh e Qadam paRa hoN kOii Mitaaye tO Kuch Na Paye


Tamaam RasmieN Hi tOR Di hiaN Keh miaN Ney AankhieN Hi phoR Di hiaN
Zamaana Ab mUjhey kO Aaiina Bhi Mera Dikhaaye tO Kuch Na Paye

Ajeeb Khwaahish hAi Meray Dil mieN Kabhi tO Meri Sada kO Sun Kar
Nazar Jhukaaye tO Khouf Khaye Nazar Uthaye tO Kuch Na Paye

maiN Apni Bey MaayeGi Chupa Kar KuwaR Apney Khuley rakhoN Ga
Keh Meray Ghar mieN Udaas mOusam Ki Shaam Aaye tO Kuch Na Paye

tOo Aashna hAi Na Ajnabi hAi Tera Mera Pyar Sarsarii hAi
Magar Yeh Kya Rasm e dOsti hAi tOo rOoth Jaye tO Kuch Na Paye

Usey Ganwa Key Phir Us kO Paney Ka Shouq Dil mieN tO yoN hAi "Mohsin"
Keh Jaisey Paani Pey Daaira Sa kOii Banaaye tO Kuch Na Paye

so jaate hain footpath pe akhbaar bicha kar

so jaate hain footpath pe akhbaar bicha kar,

mazdoor kabhi neeNd ki goli nahiN khaata
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...